فیفا ورلڈ کپ 2022 یورپ میں کوالیفائنگ راؤنڈ کیلئے ڈراز

سماء نیوز  |  Dec 04, 2020

فوٹو: اے ایف پی

کرونا وائرس کی وبا کی پہلی لہر کی وجہ سے دنیا بھر میں فٹبال سمیت دیگر کھیلوں کی سرگرمیاں معطل تھیں تاہم 6 ماہ سے زیادہ عرصے مکمل بندش کے بعد فٹبال اور ٹینس کے مقبلوں کا آغاز ہوا۔ مقابلوں کے دوران کرونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کیلئے سخت قوانین کا نفاذ تھا‘ اسٹیڈیمز میں تماشائیوں کے داخلے پر مکمل پابندی عائد تھی۔ گول کرنے پر روایتی جشن منانے کا سلسلہ بھی موقوف کر دیا گیا تھا۔ پابندیوں میں کچھ نرمی کے نتیجے میں کھیلوں کی سرگرمیوں کی بحالی کے بعد ٹینس کے دو بڑے ایونٹس یو ایس اوپن اور فرنچ اوپن کا انعقاد ہوا جبکہ مختلف یورپی ممالک میں تماشائیوں کے بغیر فٹ بال لیگ مقابلے شروع ہوئے۔ فٹبال دنیا کا مقبول ترین کھیل ہے۔ دنیا بھر کے شائقین فٹبال ہر 4 سال بعد منعقد ہونے والے سب سے بڑے فٹبال کے عالمی میلے کا انتظار کرتے ہیں۔ ورلڈ کپ فائنلز میں کوالیفائی کرنے کیلئے فیفا کی چھ کنفیڈریشنز کے رکن ملکوں میں کوالیفائنگ راؤنڈ مقابلے ہوتے ہیں۔ کرونا وائرس کی وجہ سے یہ مقابلے بھی تاخیر کا شکار ہوئے تاہم جنوبی امریکن زون میں چار مراحل مکمل ہو چکے ہیں جہاں برازیل ٹاپ پر ہے جبکہ باقی کنفیڈریشنز میں ہنوز  نہ ڈراز نکالے گئے اور نہ ہی مقابلوں کا انعقاد ہو رہا ہے۔ تاہم اب یونین آف یورپیئن فٹبال ایسوسی ایشنز (یو ایفا) نے ورلڈ کپ کوالیفائنگ راؤنڈ کے ڈراز نکالنے کا اعلان کیا ہے حالانکہ اس وقت یورپ کو کرونا وائرس کی دوسری لہر کا سامنا ہے۔

یونین آف یورپیئن فٹبال ایسوسی ایشنز (یوایفا) کے ورلڈ کپ 2022 کوالیفائنگ راؤنڈ کیلئے ڈراز 7 دسمبر 2020 کو زیورخ میں نکالے جائیں گے۔ ڈراز کیلئے یوایفا کے 55 رکن ملکوں کو چھ پوٹس میں رکھا گیا ہے جبکہ کوالیفائنگ راؤنڈ کیلئے ٹیموں کو 10 گروپوں میں تقسیم کیا جائے گا۔ پانچ پوٹس میں 10‘10 اور ایک پوٹ میں پانچ ملکوں کو رکھا گیا ہے۔ کوالیفائنگ راؤنڈز کیلئے 10گروپ اے‘ بی‘ سی‘ ڈی‘ ای‘ ایف‘ جی‘ ایچ‘ آئی اور جے ہوں گے۔ اے سے ای تک کے گروپ پانچ پانچ ٹیموں پر مشتمل ہوں گے جبکہ ایف سے جے تک کے گروپوں میں چھ چھ ٹیمیں شامل ہوں گی۔ گروپ اے سے ای تک میں سے کسی 4 میں نیشنز لیگ فائنلز 2020-21 میں پہنچنے والے 4 ملکوں بیلجیم‘ اٹلی‘ فرانس اور اسپین میں سے ایک ایک ملک کو رکھا جائے گا۔ فیفا عالمی رینکنگ میں ٹاپ 10 یورپی ٹیموں کو پوٹ ون میں رکھا گیا گیا ہے۔ جبکہ باقی پوٹس میں ٹیموں کو ان کی جغرافیائی اور سیاسی کشیدگی کی صورت حال کے پیش نظر رکھا گیا ہے۔ ہر پوٹ سے ایک ایک ٹیم ہر گروپ میں شامل کی جائے گی۔

ورلڈ کپ فائنلز میں فیفا کی 6 کنفیڈریشنز سے 32 ممالک کوالیفائی کریں گے جس میں یورپ کا حصہ سب سے زیادہ ہے۔ اس ریجن سے 13 ملکوں کی نمائندگی ہوتی ہے۔ یوایفا کے ورلڈ کپ کوالیفائنگ راؤنڈ کے ڈراز میں اس کا خاص خیال رکھا جائے گا کہ جن ملکوں کے ایک دوسرے کے ساتھ سیاسی تنازعات ہیں ان کو ایک ہی گروپ میں نہ رکھا جائے۔ اس وجہ سے آذربائیجان اور آرمینیا‘ جبرالٹر اور اسپین‘ کوسوو اور بوسنیا اینڈ ہرزیگووینا‘ کوسوو اور سربیا‘ کوسوو اور روس‘  یوکرائن اور روس کو ایک گروپ میں نہیں رکھا جائے گا۔ ہائی رسک کیٹیگری میں شامل دو ملکوں آئس لینڈ اور فارو آئس لینڈ کو بھی ایک ہی گروپ میں شامل نہیں کیا جائے گا۔

یونین آف یورپیئن فٹبال ایسوسی ایشنز (یوایفا) کی ایگزیکیٹو کمیٹی نے 4 دسمبر 2019 کو کوالیفیکشن فارمیٹ کی منظوری دی تھی۔ کوالیفائنگ میچوں میں پہلی بار وی اے آر (ویڈیو اسسٹنٹ ریفری) کا استعمال کیا جائے گا۔ ڈراز کیلئے پوٹ ون میں بیلجیم‘ انگلینڈ‘ فرانس‘ پرتگال‘ اسپین‘ اٹلی‘ کروشیا  ڈنمارک‘ جرمنی اور ہالینڈ کو رکھا گیا ہے۔ پوٹ 2 میں سوئیزرلینڈ‘ ویلز‘ پولینڈ‘ سویڈن‘ آسٹریا‘ یوکرائن‘ سربیا‘ ترکی‘ سلواکیہ اور رومانیہ پوٹ 3 میں روس‘ جمہوریہ آئرلینڈ‘ ہنگری‘ جمہوریہ چیک‘ ناروے‘ ناردرن آئرلینڈ‘ اسکاٹ لینڈ‘ آئس لینڈ‘ یونان اور فن لینڈ پوٹ 4 بوسنیا اینڈ ہرزیگووینا‘ سلوانیا‘ مونٹی نیگرو‘ شمالی  مقدونیہ‘ البانیہ‘ بلغاریہ‘ اسرائیل‘ بیلاروس‘ جارجیا‘ لگسمبرگ پوٹ 5 آرمینیا‘ قبرص‘ فارو آئس لینڈ‘ آذربائیجان‘ کوسوو‘ اسٹونیا‘ قازقستان‘ لیتھوانیا‘ لیٹویا اور انڈورا پوٹ 6 میں مالٹا‘ مالڈووا‘ لیچسٹین‘ جبرالٹر اور سان مرینو شامل ہیں۔

کرونا وائرس کی وباء کی وجہ سے ڈراز کیلئے قرعہ اندازی  ورچوئل ہوگی اور اس بار کسی بھی یوایفا کی رکن فٹبال ایسوسی ایشن کا کوئی نمائندہ ڈراز میں موجود نہیں ہوگا۔ پلان کے مطابق کوالیفائنگ راؤنڈ کے ڈراز 29 جون 2020 کو نکالے جانے تھے لیکن کرونا وائرس کی وبا کی وجہ سے انہیں ملتوی کر دیا گیا تھا۔ یورپ میں فیفا ورلڈ کپ 2022 کے  کوالیفائنگ راؤنڈ کا آغاز 21 مارچ 2021 سے ہوگا جب نیشنز لیگ اور چیمپئنز لیگ کے ایونٹس سے ٹیمیں فارغ ہو جائیں گی۔ کوالیفائنگ راؤنڈ نومبر 2021 تک جاری رہے گا۔ 10 گروپوں سے ایک ایک ٹاپ ٹیم ورلڈ کپ فائنلز کیلئے براہ راست کوالیفائی کرے گی جبکہ باقی تین ٹیموں کا فیصلہ پلے آف راؤنڈ میں ہوگا۔

ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی (واڈا) نے روسی کھلاڑیوں کے ممنوعہ دواؤں کے استعمال کے جرم میں روس پر تمام بڑے بین الاقوامی مقابلوں میں حصہ لینے پر پابندی عائد کر رکھی ہے تاہم روسی قومی ٹیم کوالیفائنگ راؤنڈ میبں حصہ لے سکتی ہے اور اگر روسی فٹبال ٹیم قطر میں ہونے والے ورلڈ کپ فائنلز میں کوالیفائی کر جاتی ہے تو پھر اس کی شرکت کے حوالے سے حتمی فیصلہ (فیڈریشن آف انٹرنیشنل فٹبال ایسوسی ایشنز (فیفا) کرے گی لیکن کسی بھی ٹیم یا کھلاڑیوں کے روسی پرچم یا ترانے کے ساتھ شرکت کرنے پر واڈا نے پابندی عائد کر رکھی ہے۔ واڈا کے اس فیصلے کے خلاف روس نے کورٹ آف آربیٹریشن فار اسپورٹس میں اپیل دائر کی ہے جس کا فیصلہ اس سال کے آخر میں سامنے آئے گا۔

کرونا وائرس کی وجہ سے یورپ میں چھ ماہ سے زائد عرصے فٹبال سمیت تمام کھیلوں کی سرگرمیاں معطل رہی تھیں اور یوایفا نے کوویڈ 19 کی وبا کی وجہ سے یوایفا یورپیئن چیمپئن شپ 2020 کو 12 ماہ کیلئے مؤخر کرتے ہوئے 2021 میں شیڈول کر دیا تھا۔ قطر میں ورلڈ کپ 2022 کا انعقاد شیڈول کے مطابق مئی جون میں ہونا تھا لیکن جولائی تک وہاں کا شدید گرم موسم کھلاڑیوں کیلئے سازگار نہیں ہے اس لیے ورلڈ کپ کے انعقاد کی تاریخ تبدیل کر کے 21 نومبر تا 18 دسمبر 2022 کر دی گئی ہے۔ گزشتہ ورلڈ کپ میں میزبان روس سمیت یورپ کی 14 ٹیمیں فائنلز کھیلی تھیں جن میں بیلجیم‘ کروشیا‘ ڈنمارک‘انگلینڈ‘ فرانس‘جرمنی‘ آئس لینڈ‘پولینڈ‘ پرتگال‘ روس‘سربیا‘ اسپین‘ سوئیزرلینڈ اور سویڈن شامل تھے۔ اٹلی‘ہالینڈ‘ ترکی‘ ناروے‘ یوکرائن اور  یونان جیسے ممالک فائنلز کیلئے کوالیفائی کرنے میں ناکام رہے تھے۔

یوایفا کے رکن ملکوں کی تعداد 55 ہے جن میں سے 34 ملکوں کو فیفا ورلڈ کپ فائنلز کھیلنے کا اعزاز حاصل ہے جرمنی نے سب سے زیادہ 19 اور اٹلی نے 18 مرتبہ فائنلز کیلئے کوالیفائی کیا۔ فرانس انگلینڈ اور اسپین نے 15‘ 15 مرتبہ فائنلز کھیلنے کا اعزاز حاصل کیا۔ یورپ کے پانچ ملکوں جرمنی‘ اسپین‘ فرانس‘ اٹلی اور انگلینڈ ورلڈ کپ ٹائٹل جیتنے میں کامیاب ہوئے۔ جرمنی اور اٹلی نے چار چار مرتبہ‘ فرانس نے دو‘ انگلینڈ اور اسپین نے ایک ایک بار ٹائٹل جیتا۔ سوئیزرلینڈ‘ کروشیا‘ ہنگری‘ ڈنمارک اور جمہوریہ چیک رنرز اپ رہ چکے ہیں۔ روس میں ہونے والے ورلڈ کپ 2018 میں یورپ سے آئس لینڈ کی ٹیم پہلی مرتبہ فائنلز کیلئے کوالیفائی کرنے میں کامیاب ہوئی تھی۔

ورلڈ کپ کوالیفائنگ راؤنڈ کے آغاز اور عوام کے مطالبے پر یورپی ملکوں میں فٹبال شائقین کو محدود تعداد میں اسٹیڈیمز میں داخلے کی بتدریج اجازت دی جا رہی ہے۔ ٹینس مقابلوں میں تو فرنچ اوپن سے اس کا آغاز کر دیا گیا تھا۔ اب اس تجربے کو وسعت دینے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ انگلینڈ کی فٹبال لیگ میں شائقین تقریباً 266 دن کی پابندی کے بعد محدود تعداد میں میچ دیکھنے کیلئے اسٹیڈیم میں واپس آگئے۔ اسٹیڈیم میں داخل ہونے والے تماشائیوں کو کرونا رولز کا مکمل اطلاق کرنا ہوگا۔ انگلینڈ کے جن علاقوں میں ٹیئر ٹو پابندیاں نافذ ہیں وہاں 2000 تماشائیوں اور ٹیئر ون پابندیوں والے ایریاز میں 4000 افراد کو اسٹیڈیم میں داخلے کی اجازت دی گئی ہے۔ بدھ کو سالفورڈ سٹی اور کارلائل کے مابین پہلا میچ تھا جس میں تماشائی تقریباً 9 ماہ بعد اسٹیڈیم میں داخل ہوئے لیکن اس بار ماحول کرونا پینڈامک سے پہلے کے ماحول سے یکسر مختلف تھا جہاں نہ تو لوگوں کا رش تھا اور نہ ہی ٹیموں کیلئے زبردست روایتی سپورٹ تھی۔ تماشائی سماجی فاصلے کی پابندی کی وجہ سے ایک دوسرے سے دور تھے۔ رولز کے تحت اسٹیڈیم میں داخلے کیلئے ون وے سسٹم اپنایا جائے گا۔ داخلے کے وقت لوگوں کا ٹمپریچر چیک ہوگا۔ اسٹیڈیمز میں داخلے کے اوقات پر سختی سے عمل ہوگا۔ اندر کیٹرنگ کی سہولت انتہائی محدود ہوگی۔ گول کرنے پر جشن منانے کی اجازت نہیں ہوگی۔ تماشائیوں کے چہروں پر ماسک لازمی ہوں گے۔ میچ ختم ہونے پر وسل بجتے ہی تمام تماشائی ایک لائن میں فاصلہ برقرار کھتے ہوئے اسٹیڈیم سے باہر جائیں گے۔ ویکمب اور لوٹن نے تماشائیوں کی تعداد کو مزید کم کر کے 1000 کر دیا ہے۔ صورت حال کا جائزہ لیتے ہوئے اگلے میچوں میں تعداد میں  بتدریج اضافہ کیا جائے گا۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More