شوبز انڈسٹری کو خیرباد کہنے والی رابی پیرزادہ نے پاکستان چھوڑنے کے فیصلے پر ’’یوٹرن ‘‘ لے لیا

سچ ٹی وی  |  Jul 10, 2020

حال ہی میں رابی پیرزادہ نےمائیکرو بلاگنگ سائٹ ٹوئٹر پر ایک اپنی پینٹنگ کی تصویر شیئر کی تھی, جس پر گلوکار عدنان سمیع نے اُنہیں خوب سراہا تھا جبکہ کچھ پاکستانی صارفین نے رابی پیرزادہ پر تنقید کی تھی اور کہا تھا کہ یہ پینٹنگ آپ نے خود نہیں بنائی ہے۔

عدنان سمیع کے تعریفی ٹوئٹ کے بعد رابی پیرزادہ نے جذبات میں آکر ٹوئٹ کیا تھا جس میں اُنہوں نے کہا تھا کہ’لوگوں کے پاکستان چھوڑ کر چلے جانے کی وجہ یہ ہے کہ بھارت ہم سے کافی بہتر ہے، وہاں کے لوگوں نے کبھی مجھ پر طنز نہیں کیا اور نہ ہی مجھے تنقید کا نشانہ بنایا۔‘

رابی پیرزادہ نے عدنان سمیع کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا کہ ’میں نے ماضی میں آپ کے بارے میں جو کچھ بھی کہا اُس کے لیے میں آپ سے معافی چاہتی ہوں۔‘

اُنہوں نے کہا کہ ’ہماری قوم کسی بھی شخص کی صلاحیتوں کی حقدار ہی نہیں ہے نہ آپ کی آواز اور نہ میری پینٹنگز۔‘

رابی پیرزادہ نے غصے میں کہا کہ ’میں بھی جلد ہی پاکستان چھوڑ دوں گی۔‘

رابی پیرزادہ کے اِس ٹوئٹ کے بعد اُن کے مداحوں اور صارفین نے اُنہیں شدید تنقید کا نشانہ بنایا, جس کے بعد رابی پیرزادہ نے اپنے اکاؤنٹ سے یہ ٹوئٹ ڈیلیٹ کردیا۔

بعدازاں سوشل میڈیا صارفین کی تنقید کا سامنا کرنے کے بعد رابی پیرزادہ نے اب پاکستان اور یہاں کے لوگوں سے اپنی محبت کا اظہار اور پاکستان نہ چھوڑنے کا فیصلہ واپس لیتے ہوئے ایک اور ٹوئٹ کیا ہے۔

رابی پیرزادہ نے اپنے ٹوئٹ میں لکھا کہ ’پاکستان میرا دل، میری جان ہے اور مجھے اپنے ملک کے لوگ بےحد عزیز ہیں اور اگر میں کبھی اپنا وطن چھوڑ کر بھی گئی تو مکّہ جاؤں گی۔‘

اُنہوں نے لکھا کہ ’وہ چینلز اور سوشل میڈیا پلیٹ فارمز جو پاکستان کے آرٹ کو پروموٹ نہیں کرتے ہیں اُنہوں نے ایک بار پھر مجھے منفی خبروں میں سب سے آگے کردیا ہے لیکن جب میں نے کچھ دیر بعد اپنے فیصلے کی تردید کردی تو کسی چینل نے میرے اس مثبت رویے کی طرف توجہ نہیں دی۔‘

پاکستان میرا دل اور جان ہے۔ اور آپ لوگ میرے اپنے ہیں۔ میں اپنا وطن کبھی چھوڑ کر گئ تو مکہ جائوں گی۔ وہ چینل اور سوشل میڈیا جو پاکستان کا آرٹ پروموٹ نہیں کرتا پھر سے ایک بار منفی خبروں میں سب سے آگے تھا،پوسٹ کے کچھ لمحات بعد میں نے تردیدکردی کیا کسی نے اسکے بارے میں بات کی، pic.twitter.com/C5fP61PUxI

— Rabi Pirzada (@Rabipirzada) July 10, 2020
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More