فوج کا ادارہ جرنیل کا نہیں قوم کا ادارہ ہے، مولانا فضل الرحمان

بول نیوز  |  Nov 27, 2021

امیر جمیعت علمائے اسلام اور پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کا کہنا ہے کہ فوج کا ادارہ جرنیل کا ادارہ نہیں قوم کا ادارہ ہے، جرنیل اس ادارے کا ایک تنخواہ دار حصہ ہے ،قومی ادارے میں خیانت کی اجازت نہیں۔

لاڑکانہ جے یو آئی کی جانب سے منعقدہ شہید اسلام کانفرنس میں انہوں نے کہا کہ پاکستان کے وہ ادارے جو ملک کی حفاظت کے دعوے دار ہیں اگر چور راستے سے لوگوں کو لاتے ہیں تو تباہی کہ ذمہ دار وہ بھی ہیں۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اس وقت پاکستانی معیشت کی کشتی ڈوب رہی ہے، ہمارے ملک کی معیشت کو کیا ہو گیا ہے؟ ہندستان، چین، انڈونیشیا، اور بنگلادیش کی معیشت اوپر جا رہی ہے ۔ پاکستان ایک واحد ملک ہے جس کی سالانہ پیداوار کا تخمینہ صفر سے بھی نیچے گر گیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ قرضے دگنے ہوچکے ہیں، میں 12 سال پہلے کہا تھا عمران خان بین الاقوامی مالی اداروں کا ایسا نمائندہ ہے جو ملک کو ان کے پاس گروی رکھے گا۔ عمران خان نے ملکی معیشت کو ڈوبا دیا ہے، چیلنج یہ ہے کہ اب کون آئے گا جو اسے بہتر کرے گا ۔

مولانا فضال الرحمان نے کہا کہ آج ایک ڈالر کے مقابلے پاکستانی روپے کی قدر 179 ہو چکی ہے، کسی بھی ملک سے زیادہ پاکستان کی بری حالت ہے ۔

سربرا پی ڈی ایم نے کہا کہ ہندوستان جب آپ سے تجارت کرنا چاہتا تھا، جب واجپائی مینار پاکستان آیا تب آپ کی معیشت مضبوط تھی، آج بھی ہندستان میں اسی بی جے پی کی حکومت ہے ۔ عمران نے کہا مودی کامیاب ہوا تو مسئلہ کشمیر حل ہو جائے گا، یہ مودی کو دعائیں دینے والا۔۔۔ آج اس نے کشمیر کو انڈیا کے حوالے کر دیا ۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ 70 سال تک ہم نے کشمیر کی قربانیوں کو دیکھا اور آج ان کے حوالے کر دیا ،کشمیریوں کے ساتھ عمران خان نے منافقت کی ہے ، ہم نے فاٹا کا انضمام کرکے وہی کیا ہے جو انڈیا نے کشمیریوں کے ساتھ کیا ، ہم نے کہا تھا جہاں کشمیر کے ساتھ زیادتی ہوئی وہاں فاٹا کے عوام کے ساتھ بھی زیادتی ہوئی ہے۔

مولانا فضل الرحمان نے اپنے خطاب میں کہا کہ اس ملک کے نوجوان کو دھوکا دیا گیا، بولا گیا 1 کروڑ نوکریاں دونگا، 50 لاکھ گھر دونگا، لیکن نوکریاں بھی چھین لیں اور گھر بھی۔ تم کیوں عوام کو دھوکا دے رہے ہو نعروں کی بنیاد پر ملک نہیں چلتے ۔

مولانا فضل الرحمان کہتے ہیں کہ اس وقت آپ کا پارلیمںٹ یرغمال ہے، کوئی قانون سازی نہیں ہوسکی، اگر کوئی قانون سازی ہوئی ہے تو ایف اے ٹی ایف کے لیے ہوئی ہے۔ آئندہ انتخابات میں دھاندلی کے لیے قانون سازی کی جارہی ہے، کس کے کہنے پر ایسا ہو رہا ہے، کون ہے وہ قوت جو ان سے ایسا کروا رہا ہے۔ مشین کے ذریعے ووٹ کو یورپ نے مسترد کیا۔

Square Adsence 300X250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More