کیا جوائے لینڈ دیکھ کر ہم سب ’گے‘ بن جائیں گے؟ محمد حنیف کا کالم

بی بی سی اردو  |  Nov 24, 2022

Getty Images

فلم جوائے لینڈ کے خلاف جماعت اسلامی کا جہاد دیکھ کر ہم میں سے کئی لوگوں کو اپنے ایمان کی فکر لاحق ہوئی ہو گی۔ ہمارے ایمان کا حصہ ہے کہ ہم گناہ گار ہیں، جو گناہ سے بچتے ہیں وہ بھی کبھی کبھی گناہ کے بارے میں سوچتے ضرور ہوں گے۔ اپنے ایمان کو گناہ کی ترغیب سے بچانا ہماری ذمہ داری ہے۔

اپنے آپ کو گناہ سے بچانے کی کوشش کرتا ایک نوجوان میں نے لاہور سے کراچی جانے والی ایک فلائیٹ پر دیکھا۔ جہاز پرواز کے لیے تیار تھا لیکن نوجوان سیٹوں کی قطار کے عین بیچ کھڑا تھا اور جہاز کا عملہ اسے کچھ سمجھانے کی کوشش کر رہا تھا۔ پرواز میں تاخیر ہو رہی تھی، میں نے عملے ایک رکن سے پوچھا کہ مسئلہ کیا ہے۔

پتہ چلا کہ نوجوان کے ساتھ والی سیٹ پر ایک خاتون بیٹھی ہیں اور یہ باریش نوجوان مصر ہے کہ یا تو خاتون کو سیٹ سے اٹھاؤ یا اسے کسی مرد کے ساتھ والی سیٹ پر بٹھایا جائے۔ خاتون سیٹ چھوڑنے کو تیار نہ تھیں اور جہاز کے عملے کو کچھ سمجھ نہیں آ رہی تھی کہ اس پاکباز کو کیسے سمجھائیں۔

جب یہ تعطل کچھ زیادہ ہی بڑھا تو میں نے نوجوان کا ہاتھ پکڑ کر اسے کہا کہ میں خدا کو گواہ بنا کر کہتا ہوں کہ تم خاتون کے ساتھ والی سیٹ پر بیٹھ جاؤ، نظریں نیچی رکھو اور اگر درود شریف یاد ہے یا کوئی اور آیت تو پورے رستے اس کا ورد کرتے جاؤ، کچھ بھی نہیں ہو گا۔

نوجوان کچھ بڑبڑاتا ہوا سیٹ پر بیٹھ گیا۔ ڈیڑھ گھنٹے بعد جہاز کراچی میں اُتر گیا۔ کوئی قیامت نہیں آئی اور مجھے یقین ہے کہ نوجوان کا ایمان بھی سلامت رہا۔

Getty Images

اب جماعت اسلامی کے جوائے لینڈ کے خلاف مہم کا بنیادی نقطہ یہ ہے کہ اس میں خواجہ سراؤں کو انسان بنا کر پیش کیا گیا ہے، جنھیں محبت بھی ہو سکتی ہے اور یہ فلم LGBTQ کو فروغ دیتی ہے۔

میری نسل کے تمام لوگوں نے جن کو کچھ پڑھنے لکھنے کے مواقع ملے ہیں اُن سب نے تھوڑا بہت مودودی صاحب کو پڑھا ہے بلکہ اکثر تو اپنے آپ کو چھوٹا موٹا مودودی مان کر چلتے ہیں۔

مودودی صاحب ایک آفاقی انقلاب کی بات کرتے تھے، اب اُن کی بنائی ہوئی جماعت پر یہ وقت آ گیا ہے کہ وہ خواجہ سراؤں سے مڈبھیڑ چاہتی ہے تاکہ ہمارا ایمان سلامت رہے۔

جماعت اسلامی کے میرے محبوب رہنما میاں طفیل احمد مرحوم تھے۔ اتنی بار تو وہ نظام مصطفی کا تذکرہ نہیں کرتے تھے جتنی تکرار سے جماعت اسلامی کی موجودہ قیادت LGBTQ کا تذکرہ کرتی ہے۔ اب تو بچے بھی پوچھنے لگے ہیں کہ ہمیں بھی بتاؤ کہ یہ LGBTQ کیا ہوتا ہے۔

میں نے بھی جوائے لینڈ دیکھی ہے اور میں بڑی ذمہ داری سے کہتا ہوں کہ فلم دیکھنے کے بعد میری جنسی ترجیحات میں کوئی فرق نہیں آیا بلکہ LGBTQ والوں کا انجام دیکھ کر ان کے لیے دل میں خدا ترسی کے ہی جذبات پیدا ہوئے۔

محمد حنیف کے دیگر کالم پڑھیے

ہمارے لائق اور نالائق آئی ایس آئی چیف: محمد حنیف کا کالم

ہمیں مصطفیٰ نواز کھوکھر کی ضرورت نہیں ہے: محمد حنیف کا کالم

محمد حنیف کا کالم: ڈوبتے پاکستان میں اپنے چیف کی تلاش

محمد حنیف کا کالم: باجوہ ڈاکٹرائن کی ایک غلطی

لیکن یہ سوالات ظاہر ہے بنتے ہیں کہ کیا ہم اپنی سکرینوں پر، اپنی کتابوں میں، اپنے شہروں کی دیواروں پر جو دیکھتے اور پڑھتے ہیں وہ کیسے ہماری ذہن سازی کرتا ہے۔ خیبر سے کراچی تک اگر ٹرین پر سفر کریں تو دونوں طرف ہر طرح کی زبان اور خوشخطی میں مردانہ کمزوری کے اشتہار لگے ہوتے ہیں۔

کوئی باہر کی مخلوق آ کر دیکھے تو یہی سمجھے گی کہ نامردی ہمارے ملک کا سب سے بڑا مسئلہ ہے لیکن آبادی میں اضافے کی شرح دیکھیں تو اس تاثر کی نفی ہو گی۔

Getty Images

چند سال پہلے بڑی ہٹ فلم ’پنجاب نہیں جاؤں گی‘ بنی۔ کیا وہ فلم دیکھنے کے بعد پاکستان کی تمام خواتین نے پنجاب جانا چھوڑ دیا۔ اسی سال نئی فلم ’مولا جٹ‘ پورے پاکستان میں دیکھی گئی تو کیا یہ فلم دیکھنے کے بعد سب نوجوان کرتے لاچے پہن کر گنڈاسہ اٹھا کر کسی نوری نت کی تلاش میں چلے گئے۔

فلم کے خلاف جہاد کرنے والوں نے ہمیں یہ بھی نہیں بتایا کہ کیا ہم جوائے لینڈ دیکھنے بعد سب کے سب LGBTQ ہو جائیں گے یا ہم سے مضبوط ایمان والے بچ بھی سکتے ہیں۔ سنسر بورڈ میں بیٹھے جن بزرگوں نے یہ فلم پاس کی تھی کسی نے ان سے جا کر پوچھا کہ آپ کے جذبات میں ابھی تک طلاطم برپا ہے یا ٹھنڈا ہو گیا۔

اور اگر فرض کریں کہ کوئی LGBTQ فلم جا کر دیکھ لے تو کیا وہ اس کے کرداروں کو دیکھ کر عبرت پکڑ لے گا یہ پہلے سے زیادہ LGBTQ ہو جائے گا؟

جماعت اسلامی کے ایک رہنما نے بغیر فلم دیکھے یہ اعتراض بھی کیا کہ فلم میں ایک کردار کا نام حیدر ہے، تو اگر ہدایتکار اس کردار کا نام بدل کر حنیف یا مشتاق رکھ دیں تو کیا ہمارا ایمان نسبتاً محفوظ رہے گا۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More