’کیا دہلی کی جامع مسجد پاکستان میں ہے؟‘

بول نیوز  |  Jan 16, 2020

بھیم آرمی سربراہ چندر شیکھر آزاد کی ضمانت سے متعلق دہلی کے تیس ہزاری کورٹ میں ایک اہم سماعت ہوئی جس میں عدالت نے دہلی پولس کو زبردست پھٹکار لگائی۔

انڈین دارالحکومت نئی دہلی کی جامع مسجد میں شہریت کے متنازع قانون کے خلاف احتجاج کرنے پر گرفتار کیے گئے بھیم آرمی کے سربراہ چندر شیکر آزاد کے مقدمے کی سماعت کرتے ہوئے دہلی کی ایک عدالت کے جج نے پولیس سے کہا ہے کہ ’احتجاج کرنا ہر شہری کا حق ہے، آپ تو ایسا برتاؤ کر رہے ہیں جیسے جامع مسجد انڈیا نہیں بلکہ پاکستان میں ہو۔‘

دہلی پولس کے ذریعہ یہ دلیل پیش کیے جانے پر کہ مذہبی مقامات کے باہر احتجاجی مظاہرہ نہیں کیا جا سکتا، عدالت نے کہا کہ ’’لوگ کہیں بھی پرامن مظاہرہ کر سکتے ہیں، اور جامع مسجد پاکستان میں نہیں ہے۔‘‘

 منگل کے روز ہوئی اس سماعت میں دہلی پولس کی جانب سے پیش وکیلوں کے دلائل پر سخت تبصرہ کرتے ہوئے عدالت نے کہا کہ ’’آپ تو اس طرح برتاؤ کر رہے ہیں جیسے جامع مسجد پاکستان میں ہو۔‘‘

انڈین ویب سائٹ دی وائر کے مطابق جج نے سرکاری وکیل کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ’احتجاجی مظاہرے کرنے میں غلط کیا ہے، یہ ہر شہری کا آئینی حق ہے۔‘

 بھیم آرمی کے سربراہ کو دہلی پولیس نے 21 دسمبر کو اس وقت گرفتار کیا تھا جب وہ اپنے دیگر ساتھیوں اور مسلمانوں کے ساتھ مل کر جامع مسجد میں شہریت کے متنازع ترمیمی قانون کے خلاف احتجاج کر رہے تھے۔

دراصل دہلی پولس کے وکیل نے مذہبی مقام کے باہر مظاہرہ کو لے کر سوال اٹھایا تھا جس پر تیس ہزاری کورٹ نے دہلی پولس کو ڈانٹ لگائی۔

۔ عدالت نے یہ بھی کہا کہ ’’لوگ کہیں بھی پرامن مظاہرہ کر سکتے ہیں۔ جامع مسجد پاکستان میں نہیں ہے۔ ویسے پاکستان میں بھی پرامن مظاہرے ہوتے ہیں۔‘‘دراصل یہ پورا معاملہ دریا گنج تشدد سے جڑا ہوا ہے جس کے بعد بھیم آرمی سربراہ چندر شیکھر آزاد کو حراست میں لے لیا گیا تھا۔

معاملے کی سماعت کے دوران دہلی پولس کی طرف سے پیش سرکاری وکیل نے چندرشیکھر آزاد پر قابل اعتراض بیان دینے کا بھی الزام عائد کیا۔

اس الزام پر عدالت نے دہلی پولس سے سوال کیا کہ کس طرح کے بیانات دیئے گئے اور آپ نے اب تک کیا کارروائی کی؟ سوال کے جواب میں سرکاری وکیل نے عدالت سے کہا کہ ’’میں آپ کو وہ قانون دکھانا چاہتا ہوں جو مذہبی اداروں کے باہر مظاہرہ پر روک کی بات کرتا ہے۔‘‘

اس پر تیس ہزاری کورٹ کے جج نے دہلی پولس سے کہا کہ ’’کیا آپ کو لگتا ہے کہ ہماری دہلی پولس اتنی پسماندہ ہے کہ ان کے پاس کوئی ریکارڈ نہیں ہے؟ چھوٹے معاملوں میں دہلی پولس نے ثبوت درج کیے ہیں لیکن اس واقعہ میں ایسا کیوں نہیں؟‘‘

اس سماعت کے دوران چندر شیکھر کی طرف سے پیش وکیل محمود پراچہ نے دہلی پولس کی جانب سے پیش کردہ دلائل کو مسترد کر دیا۔ انھوں نے کہا کہ چندرشیکھر نے ایسا کوئی قابل اعتراض بیان نہیں دیا جس کا تذکرہ کیا جا رہا ہے۔

محمود پراچہ نے کہا کہ ’’وہ (چندرشیکھر) صرف شہریت قانون اور این آر سی کو لے کر اپنا احتجاج درج کرا رہے تھے۔‘‘ دونوں طرف کی دلیلیں سننے کے بعد عدالت نے معاملے کی سماعت آئندہ بدھ تک کے لیے ملتوی کر دی ہے

خیال رہے کہ چندر شیکر آزاد کی تنظیم بھیم آرمی انڈیا میں دلتوں کے حقوق کے لیے کام کرتی ہے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More