فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو اتحاد میں شرکت، ترکی کی شدید مخالفت

بول نیوز  |  May 15, 2022

ترکی نے فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو میں شمولیت کی مخالفت کردی۔

غیرملکی خبر رساں ادارے کےمطابق ترک صدر رجب طیب اردوان کا کہنا ہے کہ انقرہ کے لیے یہ ممکن نہیں ہےکہ وہ یوکرین پر روسی جارحیت کے اس ماحول میں فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو میں شمولیت کی حمایت کرے۔ ترکی خود نیٹو کا حصہ ہے لیکن اسکینیڈیوین ممالک  کی نیٹو کی رکنیت سازی کو لے کر اس کے مثبت نظریات نہیں ہیں حتیٰ کہ ان کے کچھ ممالک میں ممبران اسمبلی بھی ہیں لیکن ان کے لیے اس طرح کی حمایت ممکن نہیں ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق اس معاملے پر ترکی کی مخالفت فن لینڈ اور سوئیڈن کی نیٹو کی رکنیت سازی میں مشکلات کھڑی کرسکتی ہے کیونکہ نیٹو کا رکن بننے کے لیے تمام نیٹو اتحادیوں کی منظوری لازم ہے۔

ترک صدر کا بیان ایسے وقت میں سامنے آیا جب گزشتہ روز فن لینڈ کے صدر اور وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ان کا ملک بلاتاخیر فوری طور پر نیٹو کی رکنیت کے لیے درخواست دے۔

یاد رہے، روسی صدر نے فن لینڈ اور سوئیڈن کو خبردار کیا ہے کہ ان کا نیٹو اتحاد میں شامل ہونا بلا جواز ہے۔ اتحاد میں شامل ہونے کے دونوں ممالک کو سنگین نتائج بھگتنے ہوں گے۔

مزید پڑھیں9 hours agoدبئی میں تین لاکھ ڈالرز سے زائد کا ڈاکہ، چار افراد گرفتار

دبئی کے جمیرہ ولیج میں ڈاکوؤں نے ایک گھر میں گھس کر...

10 hours agoروس نے فن لینڈ کی بجلی بند کرنے کی ٹھان لی

فن لینڈ کی جانب سے نیٹو میں شمولیت کے امکان کے باعث...

11 hours agoجرمن چانسلر نے روسی مؤقف کو پاگل پن کا مظہر قرار دے دیا

جرمن چانسلر  کا کہنا ہے کہ یوکرینی جنگ کے حوالے سے روسی...

11 hours agoروس یوکرین جنگ، خوراک و توانائی کے عالمی بحران کی بازگشت سنائی دینے لگی

سات مضبوط ترین عالمی معیشتوں پر مشتمل ممالک گروپ جی سیون نے...

11 hours agoنئے جاسوسوں کی بھرتی کیلئے برطانوی خفیہ ایجنسی کا انوکھا طریقہ

برطانیہ کی معروف ترین خفیہ ایجنسی ایم آئی 5 نئے جاسوسوں کی...

13 hours agoروس کی برطانیہ پر 4 منٹ سے بھی کم وقت میں جوہری حملے کی دھمکی

روس نے برطانیہ پر 4 منٹ سے بھی کم وقت میں جوہری...

تازہ ترین نیوز پڑہنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کریں بول نیوزایپ

General Rectangle – 300×250
مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More