طالبان نے ناکارہ جہاز اور ہیلی کاپٹر مرمت کرا لیے، آزمائشی پروازیں

اردو نیوز  |  Aug 18, 2022

افغانستان میں طالبان نے غیرملکی افواج کی جانب سے چھوڑے گئے ناکارہ جہاز اور ہیلی کاپٹروں کی مرمت کے بعد آزمائشی پروازیں کی ہیں۔

برطانوی خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق افغان وزارت دفاع کی جانب سے ایک جہاز کو بدھ کو دارالحکومت کابل میں اڑایا گیا۔

ایک سال قبل جب طالبان نے ملک کا کنٹرول سنبھالا تو اس وقت غیرملکی افواج نے انخلا کرتے ہوئے بڑی تعداد میں ساز وسامان چھوڑا تھا جن میں ایک جہاز اور ہیلی کاپٹرز بھی شامل ہیں، تاہم وہ اڑنے کے قابل نہیں تھے جن کی اب مرمت کی گئی۔

رپورٹ کے مطابق کابل ایئرپورٹ کے قریب اڑائے جانے والے جہاز اور ہیلی کاپٹروں کی پرواز کافی نیچی رکھی گئی۔

ہیلی کاپٹرز میں سے ایک روسی ساختہ ایم آئی 24 ہے جبکہ دوسرے دو امریکی ساختہ ہیں۔

وزارت دفاع کے ترجمان عنایت اللہ خوارزمی نے روئٹرز کو بتایا کہ ’طالبان نے حال ہی میں کچھ ہیلی کاپٹروں کی مرمت کی ہے جن کو آزمائشی طور پر اڑایا گیا۔‘

انہوں نے یہ وضاحت نہیں کی کہ وہ کس ملک کے بنے ہوئے تھے، تاہم اتنا بتایا کہ ’تمام قسم کے جہاز‘ ٹیسٹ کیے جا رہے ہیں۔

یہ واضح نہیں ہو سکا کہ ہیلی کاپٹروں کی مرمت کے لیے تکنیکی مدد کہاں سے حاصل کی گئی یا کس نے مہیا کی۔

طالبان حکام اس سے قبل اس عزم کا اظہار کر چکے ہیں کہ سابق افغان فوجیوں، پائلٹس، مکینکس اور دیگر ماہرین کو سکیورٹی فورسز میں شامل کیا جائے گا۔

وزارت دفاع کی جانب سے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ اس کی انجینیئرز کی ٹیم نے حال ہی میں 35 ٹینکوں، 15 ہموی اور 20 امریکی ناوستر گاڑیوں کی مرمت کی ہے۔

پچھلے سال اگست میں طالبان نے ملک کا کنٹترول سنبھالا تھا جبکہ پیر کو اس کی سالگرہ کے موقع تقریب کا اہتمام ہوا جس میں سخت گیر گروپ نے ہوائی فائرنگ کے ذریعے خوشی کا اظہار کیا تھا۔

امریکی فوج نے جاتے ہوئے 70 جہاز اور درجنوں فوجی گاڑیوں کو ناکارہ کر دیا تھا جبکہ کابل سے نکلنے سے قبل ایئرپورٹ پر ایئرڈیفنس نظام کو بھی ناکارہ کر دیا تھا۔

سپیشل انسپکٹر جنرل برائے افغانستان بحالی کا کہنا تھا کہ 2002 اور 2017 کے دوران امریکہ نے افغان حکومت کو 28 ارب ڈالر سے زائد کا دفاعی سامان مہیا کیا، جن میں ہتھیار، گاڑیاں، اندھیرے میں دیکھنے والی ڈیوائسز، جہاز اور نگرانی کے دوسرے آلات شامل تھے۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More