کیا طالبان لشکر گاہ پر قبضہ کر کے اسے برقرار رکھ سکیں گے؟

بی بی سی اردو  |  Aug 04, 2021

افغانستان
Getty Images

افغان صوبے ہلمند میں طالبان اور حکومتی فورسز کے درمیان جنگ نے کافی شدت اختیار کر لی ہے۔ طالبان صوبائی دارالحکومت لشکر گاہمیں داخل ہوچکے ہیں جہاں پر انہوں نے سرکاری ریڈیو ٹیلی وژن کے صوبائی دفتر پر قبضہ کر کے یہاں پر بیس سال بعد اپنی نشریات کا آغاز کیا ہے۔

اس کے علاوہ حکومتی فورسز اور طالبان کے درمیان گورنر ہاوس اور شہر کے دیگر حساس علاقوں میں شدید جھڑپیں جاری ہیں۔لشکر گاہ میں موجود مقامی افراد کا کہنا ہے کہ شہر کے جن علاقوں پر طالبان کا قبضہ ہے وہاں حکومتی ہوائی فورسز کی جانب سے شدید بمباری جاری ہے جس میں ایک یونیورسٹی کو بھی نشانہ بنایا گیا۔

افغان طالبان کے مرکزی ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے ہفتے کے روز اپنے ٹوئٹر اکاونٹ سے دعویٰ کیا تھا کہ حکومتی فورسز نے انڈین حکومت کے فراہم کردہ جنگی جہازوں سے لشکر گاہ کے بڑے ہسپتال کو نشانہ بنایا۔

نامور افغان صحافی بلال سروری کے مطابق منگل کی صبح امریکی ہوائی جنگی جہازوں نے بھی لشکر گاہ میں طالبان جنگجوں پر دو مرتبہ شدید بمباری کی۔

لشکر گاہ میں موجود طالبان ملٹی میڈیا کمیشن کے سربراہ اسد افغان نے راقم الحروف کومنگل کی تازہ صورتحال کے متعلق بتایا کہ طالبان نے لشکر گاہ میں گورنر ہاوس، مرکزی جیل، پولیس، انٹیلیجنس اور فوج کے صوبائی ہیڈکوارٹرز کے علاوہ دیگر تمامسرکاری عمارتوں پر قبضہ کر لیا ہے۔

مقامی افراد نے اسد افغان کی اسدعوے کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ طالبان نے ان عمارتوں کا محاصرہ کر رکھا ہے جس سے حکومتی فورسز ایک دوسرے کی مدد کو نہیں پہنچا پا رہیں۔ اسد افغان نے دعویٰ کیا کہ طالبان نے لشکر گاہ میں واقع صوبے کے واحد ائیر پورٹ کا بھی مکمل محاصرہ کر رکھا ہے اور ان کے جنگجو کسی جہاز کو اڑنے یا اترنے نہیں دے رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

افغان صدر: ’اگر طالبان نے پنجابیوں سے بیعت لی ہے تو اپنے آپ کو افغان نہ کہیں‘

افغانستان کے تین بڑے شہروں میں طالبان کے حملے

افغانستان میں طالبان کی تیزی سے پیش قدمی کی بڑی وجوہات کیا ہیں؟

صحافیبلال سروری نے بی بی سی اردو سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ طالبان نے منگل کی صبح ایک موٹر بم حملے میں لشکر گاہ جیل کو نشانہ بنایا جس سے جیل کے ایک طرف کی دیوار منہدم ہوچکی ہے۔

بلال سروری نے مزید بتایا کہ شدید لڑائی کی وجہ سے مقامی لوگوں کو سخت مشکلات کا سامنا ہے اور لوگ اپنے گھروں میں قید ہیں۔

ماضی قریب میں ہلمند کے دیگر اضلاع سے بھی اکثر لوگ طالبان کی پیش قدمی کے بعد صوبائی مرکز سے نقل مکانی کر چکے تھے جس کی وجہ سے اب شہر میں کھانے پینے کی اشیا کی شدید قلت ہے۔

شہر کے مرکزی بازار کے نصف حصہ پر حکومتی فورسز کا کنٹرول ہے اور باقی طالبان کے زیر قبضہ ہے۔ شدید لڑائی کی وجہ سے زخمیوں کو ہسپتال پہنچانا مشکل ہے۔

طالبان نے گذشتہ روز سوشل میڈیا پر کچھ ایسی ویڈیوز بھی نشر کیں جن میں دو درجن کے قریب ان افغان فوجیوں کو دکھایا گیا اور ان سے بات چیت کی گی جو ان کے بقول لشکر گاہ میں انھوں نے پکڑے تھے۔ بلال سروری کے مطابق پکڑے گیے فوجی اور حکومتی اہلکار طالبان کو دیگر فوجیوں اور حکومتی اہلکاروں کی نشاندہی کررہے ہیں جو لشکرگاہ سے فرار ہونے کی کوششوں میں ہے۔

افغانستان
Getty Images

لشکر گاہ کی اہمیت کیا ہے؟

طالبان کے قریب سمجھے جانے والے افغان صحافی نصیب زدران کے مطابق تاریخی لحاظ سے جس کا ہلمند پر کنٹرول رہا ہے، اسے افغانستان کے جنوبی اور مغربی صوبوں میں برتری حاصل رہتی ہے۔ زدران کے مطابق لشکرگاہ پر طالبان کے قبضہ سے افغانستان کے جنوبی اور مغربی صوبے خصوصاً ہرات اور قندھار مکمل طور پر طالبان کے کنٹرول میں آجائیں گے۔ اس لیے طالبان اور حکومت دونوں جانب سے لشکر گاہ پر قبضہ کی اس جنگ نے ایسی سخت شدت اختیار کی ہے۔

تین ماہ قبل یکم مئی کو جب افغان طالبان نے گذشتہ سال فروری میں امریکہ کے ساتھ کیے گئے دوحہ معاہدے کی جنگ بندی کے مدت کے اختتام پر اپنے حملوں کا آغاز کیا تو طالبان نے اس کی شروعات بھی ہلمند سے ہی کی تھی۔

طالبان نے صوبائی دارالحکومت لشکر گاہ کے علاوہ ناوا اور نہر السراج اضلاع پر شدید منظم حملے کیے جنہیںشروع میں حکومتی فورسز کے مقابلے میں کئی کامیابیاں ملیں مگر محض چند روز کے بعد حکومتی فورسز نے شدید فضائی بمباری کی مدد سے طالبان کو نہ صرف پیچھے دکھیل دیا بلکہ ان کو شدید نقصانات سے بھی دوچار کیا۔ مگر اب طالبان نے ہلمند کے تمام پندرہ اضلاع پر قبضہ کر لیا ہے۔

ہلمند افغانستان کے جنوب میں واقع ملک کا سب سے بڑا صوبہ ہے جس کی سرحدیں پاکستان کے صوبہ بلوچستان کے علاوہ سات افغان صوبوں کے ساتھ ملتی ہیں جن میں قندھار، نیمروز، فراہ، غور، دایکندی، ارزگان اور زابل شامل ہیں۔

ہلمند افغان طالبان کا ایک تاریخی مضبوط گڑھ رہا ہے جو نائن الیون کے بعد ان افغان صوبوں میں شامل تھا جہاں پر طالبان نے جلد ہی اپنے قدم جمائے۔ یہ وہ صوبہ ہے کہ جہاں پر امریکہ اور اس کی اتحادی افواج کو طالبان کی تاریخی مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا۔ ہلمند کی ایک اہم خصوصیت یہ ہے کہ افیون کی کاشت اور پیداوار کی اہم جگہ ہے ۔

صحافی و تجزیہ کار ڈاکٹر داود اعظمی نے راقم الحروف کو بتایا کہ پچھلے بیس سالوں میں یہ پہلی مرتبہ ہے کہ طالبان نے لشکر گاہ کی اندرونی اہم جگہوں تک رسائی حاصل کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اگرچہ افغان زمینی فورسز کو بعض جگہوں ميں طالبان کے مقابلے میں ناکامیوں کا سامنا کرنا پڑا ہے مگر ان کو فضائی بمباری کی مدد حاصل ہے جو ان کے خیال میں طالبان کی پیش قدمی آہستہ کر کے يا روک کر ان کو پیچھے ہٹنے پر مجبور کرسکتی ہے۔

افغانستانمیں انٹرنیشل کرائسز گروپ سے وابسطہ تجزیہ کار انڈریو واٹکنز کا کہنا ہے کہ لشکر گاہ کی صورتحال انتہائی خراب ہے،اس شہر کے باہر سے روابط بالکل کٹ چکے ہیں اور اگر طالبان کے حالیہ حملے سے اس کا دفاع کر لیا بھی جائے تو پھر بھی حکومتی فورسز اس صورتحال میں شاید زیادہ دیر تک اس پر اپنا قبضہ برقرار نہ رکھ سکیں۔

افغانستان
Getty Images

ان کے مطابق اگرچہ یہ یقینی طور پر نہیں کہا جاسکتا کہ آیا لشکر گاہ وہ پہلا صوبائی دارالحکومت اور بڑا شہر ہوگا جو طالبان کے قبضہ میں آجائے گا مگر یہ واضح ہے کہ اس شہر پر قبضہ طالبان کے اولین ترجیحات میں شامل ہے۔

واٹکنز جو ماضی میں افغانستان کے لیے اقوام متحدہ کے سیاسی مشن کا بھی حصہ رہ چکے ہیں، انھوں نے بی بی سی اردو کو بتایا کہ لشکر گاہ پر ممکنہ طالبان کا قبضہ ان کے ان حالیہ دعوں کی نفی کرتا ہے جس میں طالبان نے کہا تھا کہ وہ افغان عوام کو نقصانات سے بچانے کی خاطر فی الحال بڑے شہروں پر قبضہ کرنے کی کوشش نہیں کریں گے جو کہ ان کے بقول یہاں پر عوام کے شدید جانی نقصانات کا سبب بن سکتا ہے۔

واٹکنز کا کہنا کہ لشکر گاہ پر طالبان شاید فی الحال اپنی عسکری قوت دکھانے کے لیے چند دن کا علامتی قبضہ جمائیں اور اپنے جنگجوں کی حکومتی فورسز کی فضائی بمباریمیں جانی نقصانات سے بچانے کے لیے شاید جلد ہی یہاں سے نکل جائیں۔

کابل میں کئی سالوں سے مقیم سوئٹذرلینڈسے تعلق رکھنے والے صحافی فرانز مارٹے کا بھی کہنا ہے کہ حالیہ لڑائی میں طالبان کو فضائیبمباری کی وجہ سے شدید جانی نقصان کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

ایسی صورتحال میں لشکرگاہ جیسے بڑے شہر کو حکومتی فضائی بمباری کی وجہ سے شاید وہ زیادہ دیر اپنے قبضہ میں نہ رکھ سکیں، اس لیے شاید طالبان لشکر گاہ پر قبضہ نہیں کریں گے بلکہ اپنی جنگی قوت کے اظہار کے لیے یہاں پر ایک مختصر قبضہ کر کے حکومتی فورسز پر اپنی برتری دکھانا چاہتے ہیں۔

مگر ان دو ماہرین کی رائے پر یہ سوال بھی ابھرتا ہے کہ شاید لشکر گاہ پر طالبان کے قبضہ کے بعد وہاں سے حکومتی فورسز کا ان کو نکال باہر کرنا دیگر صوبوں میں طالبان جنگجوں کے مورال کو نقصان پہنچائے کیونکہ افغان حکومت کے ارکان اور طالبان کےدیگر افغان مخالفین شروع سے یہ کہتے آرہے ہیں کہ طالبان نے اب تک جن اضلاع پر قبضہ کیا وہ دور افتادہ کم آبادی والے علاقے ہیں جبکہ بڑے شہروں میں ملک کی بیشتر آبادی آباد ہے، اس لیے حکومتی فورسز ان کے دفاع پر توجہ مرکوز کیے ہوئے ہیں اور طالبان کا ان پر قبضہ آسان نہیں۔

یہ بھی پڑھیے

لشکر گاہ کی گلیوں میں لاشیں، افغان فوج اور طالبان کے درمیان شدید لڑائی جاری

طالبان کے عروج، زوال اور اب دوبارہ پیش قدمی کی داستان

سات ملک جنھیں افغانستان میں طالبان کی 'واپسی' سے پریشانی لاحق ہے

عراق سے امریکی فوجیوں کے انخلا سے ایران کیسے فائدہ اٹھا سکتا ہے؟

واٹکنز اور مارٹے کے برعکس نصیب زدران کا کہنا ہے کہ لشکر گاہ کی لڑائی سے لگتا ہے کہ طالبان نے اپنی جنگی حکمت عملی میں تبدیلی لائی ہے۔ انھوں نے اب تک بڑے شہروں اور صوبائی دارالحکومتوں پر قبضہ کرنے سے اجتناب کیا تھا کیونکہ اسکے لیے زیادہ وسائل اور افرادی قوت کا درکار ہوتی ہےاور اسی لیےطالبان نے لشکر گاہ پر قبضہ کے لیے اپنی سپیشل فورسز سمیت کافی افرادی قوت لگا رکھی ہے۔

ان کے مطابق طالبان لشکر گاہ پر جلد از جلد قبضہ کرنا چاہتے ہیں تاکہ یہاں سے گزرنے والی جنوبی اور مغربی اضلاع کی شاہراہوں کو اپنے کنٹرول میں لاسکیں اور یہاں پر مصروف اپنی کثیر افرادی قوت اور خصوصی دستوں کو دیگر شہروں پر قبضے کے لیے بڑھائیں۔

ہلمند میں افغان فورسز کے سربراہ جنرل سمیع سادات

ہلمند میں طالبان کے خلاف لڑائی میں حکومتی فورسز کی قیادت کرنے والا بریگیڈئیر جنرل سمیع سادات ہیں جو افغان فوج کے ایک اعلیٰ تعلیم یافتہ جنرل ہیں۔ ان کی ابتدائی تعلیم اور پرورش اسی صوبہ میں ہوئی۔ جنرل سادات افغان آرمی کے میوند کورپس کے سربراہ ہیں اور وہ اس سے قبل افغان انٹیلجنس کے ایک اہم اہلکار اور افغان سپیشل فورسز کے کمانڈر رہ چکے ہیں۔

سادات نے امریکہ اور یورپ کی ملٹری اکیڈمیوں میں پیشہ ورانہ مہارت کی تعلیم حاصل کی ہے اور ان کی افغانستان میں امریکی فورسز کے سربراہ جنرل سکاٹ ملر کے ساتھ طویل قریبی دوستی بھی رہی ہے۔

سادات شروع سے ہلمند میں افغان طالبان اور القاعدہ کے اہم ہدف رہے ہیں کیونکہ انھوں نے ہلمند میں القاعدہ اور طالبان کے خلاف ہونے والے بیشتر اہم حملوں کی خود نگرانی کی ہے۔

بلال سروری کے ساتھ اس سال مئی مہینے کے آخر میں اپنے ایک طویل آڈیو انٹرویو میں جنرل سادات نے انکشاف کیا کہ ہلمند کے لیے طالبان کے موجودہ گورنر مولوی عبداالاحد عرف مولوی طالب کو انھوں نے چند برس قبل ہلمند کے ضلع سنگین سے گرفتار کر کے کابل میں کئی ہفتوں تک ان کی خود انٹروگیشن کی تھی جو بعد میں دوحہ معاہدہ کے تحت طالبان کے رہا ہونے والے قیدیوں میں شامل تھے۔

ہلمند، القاعدہ اور پاکستانی طالبان

پاکستانی طالبان اور القاعدہ کے نشریاتی و تبلیغی مواد کا جائزہ لیں تو افغان طالبان کے ان دونوں اتحادی گروہوں نے شروع سے ہی ہلند میں طالبان کی امریکہ، اس کے اتحادیوں اور افغان فورسز کے خلاف جنگوں میں بھرپور معاونت کی ہیں۔ 2007 سے جب طالبان نے یہ جنگی محاذ فعال بنایا تو یہ دونوں گروہ اپنے جنگجوں کو افغان طالبان کی صفوں میں لڑنے کے لیے یہاں پر بجھواتے رہے ہیں۔

جنرل سمیع سادات نے بھی اپنے آڈیو انٹرویو میں یہ انکشاف کیا تھا کہ القاعدہ اور اس کی برصغیر شاخ کے ارکان اب بھی ہلمند میں طالبان کے ساتھ پناہ لیے ہوئے ہیں جو کہ حکومی فورسز کے ساتھ لڑائی میں طالبان کو مالی، تکنیکی اور افرادی مدد فراہم کر رہے ہیں۔

القاعدہ کے رسمی نشریاتی اور تبلیغی اداروں شائع شدہ مواد کا باریک بینی سے جائزہ بھی جنرل سادات کے ان دعوں کی تصدیق کرتا ہے۔ مثلاً وزیرستان سے سال 2015 میں القاعدہ کے انخلا کے بعد ہلمند ابتدائی وہ ایک اہم صوبہ تھا جہاں افغان طالبان کے زیر قبضہ علاقوں میں القاعدہ نے پناہ حاصل کی۔ یہیں پر سال 2019 کے ستمبر مہینے میں القاعدہ برصغیر کے سربراہ مولانا عاصم عمر امریکی اور افغان فورسز کے ایک مشترکہ حملے میں مارے گئے جو افغان طالبان کے ایک مقامی کمانڈر کے گھر میں اپنے ساتھیوں اور اہل خانہ سمیت رہائش پذیر تھے۔

اسی طرح اس سے ایک سال قبل جون کے مہینے میں پنجاب کے ضلع خانیوال سے تعلق رکھنے والے القاعدہ برصغیرکے خارجہ امور کے سربراہ اور پاکستان میں نائین الیون کے بعد القاعدہ کا اہم بانی رکن رانا عمیر افضل بھی یہیں پرامریکی اور افغان فورسز کے ایک مشترکہ حملہ میں نشانہ بنے۔

اس کے علاوہ سال 2016 کے ستمبر مہینے میں یہاں پر القاعدہ برصغیر کے نشریاتی اور تبلیغی ادارے السحاب برصغیر کے سربراہ انجینئیر اسامہ ابراہیم غوری بھی ایک امریکی ڈرون حملے میں مارے گئے جن کا تعلق پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد سے تھا۔

مزید خبریں

Disclaimer: Urduwire.com is only the source of Urdu Meta News (type of Google News) and display news on “as it is” based from leading Urdu news web based sources. If you are a general user or webmaster, and want to know how it works? Read More